ایران مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے پاکستان کے موقف کی حمایت جاری رکھے گا، ایرانی قیادت کا اعلان

Share this story

اسلام آباد (ویب ڈیسک)وزیر اعظم عمران خان نے پاک ایران دوطرفہ تجار ت بڑھانے پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ دونوں ممالک تعلقات تعاون کو باہمی فائدہ کیلئے مزید مضبوط کریں۔

خبر رساں ادارے این این آئی کے مطابق وزیر اعظم عمران خان سے پاکستان کے دورہ پر آئے ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف نے ملاقات کی جس میں پاک ایران تعلقات، علاقائی امور، افغان امن عمل، مسئلہ کشمیر پر بات چیت کی گئی۔

وزیراعظم عمران خان نے پاک ایران دو طرفہ تجارت بڑھانے پر زور دیتے ہوئے کہاکہ پاکستان ایران کے درمیان مضبوط بردارنہ تعلقات ہیں۔ وزیر اعظم نے کہاکہ دونوں ممالک تعلقات تعاون کو باہمی فائدہ کیلئے مزید مضبوط کریں۔

وزیر اعظم نے ایران میں کورونا کی وجہ سے اموات پر گہرے دکھ اور رنج کا اظہار کیا۔وزیر اعظم نے ملاقات میں کورونا سے نمٹنے میں پاکستانی حکمت عملی سے ایرانی وزیر خارجہ کو آگاہ کیا۔ وزیر اعظم نے کہاکہ سمارٹ لاک ڈاؤن اور دیگر اقدامات سے کورونا سے نمٹنے میں مدد ملی،پاکستان خطے میں امن واستحکام کے لیے کوششیں کر رہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ افغانستان میں امن کے حامی ہیں۔

ایرانی وزیر خارجہ نے دو طرفہ تعلقات بڑھانے کے عزم کا اظہار کیا۔ایرانی وزیر خارجہ نے مسئلہ کشمیر پر پاکستان کی حمایت جاری رکھنے کا عزم کیا۔

واضح رہے کہ ایرانی وزیر خارجہ ڈاکٹر جواد ظریف نے وزارتِ خارجہ میں وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی سے ملاقات کی جس میں دو طرفہ تعلقات،کثیر جہتی شعبہ جات میں دو طرفہ تعاون کے فروغ،کرونا وبائی صورتحال سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔دونوں وزرائے خارجہ کے مابین بہتر باڈر مینجمنٹ، دو طرفہ روابط کے فروغ اور زائرین کو بہتر سہولیات کی فراہمی کے حوالے سے بھی تبادلہ خیال ہوا۔ایرانی وزیر خارجہ نے پر تپاک استقبال پر وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کا شکریہ ادا کیا۔ شاہ محمود قریشی نے کہاکہ پاکستان اور ایران کے مابین گہرے دیرینہ، تاریخی برادرانہ تعلقات ہیں۔وزیر خارجہ نے ایران میں کرونا وبا کے باعث ہونیوالے جانی نقصان پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے، وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کیلئے ایرانی حکومت کے اقدامات کی تعریف کی۔

شاہ محمود قریشی نے کہاکہ پاکستان اور ایران دو طرفہ تجارت، سرمایہ کاری، سیکورٹی و دیگر باہمی دلچسپی کے شعبہ جات میں دو طرفہ تعاون کے فروغ کیلئے علاقائی و دیگر اہم فورمز سے مستفید ہو سکتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ افغانستان میں دیرپا اور مستقل امن کا قیام، خطے میں امن و استحکام کیلئے انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ انہوں نے کہاکہ بین الافغان مذاکرات کی صورت میں افغان قیادت کے پاس قیام امن کیلئے ایک نادر موقع موجود ہے جسے کسی صورت ہاتھ سے نہیں جانے دینا چاہیے۔

دونوں وزرائے خارجہ نے افغانستان میں قیام امن سمیت خطے کے امن و استحکام کیلئے مشترکہ کاوشیں بروئے کار لانے پر اتفاق کیا۔وزیر خارجہ نے اپنے ایرانی ہم منصب کو مقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری بھارتی مظالم اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں سے آگاہ کیا۔وزیر خارجہ نے پاکستانی عوام کی طرف سے، مظلوم کشمیریوں کی حمایت پر، ایران کے سپریم لیڈر علی خامنہ ای کو خراج تحسین پیش کیا،۔دونوں وزرائے خارجہ نے بعض یورپی ممالک میں اسلاموفوبیا کے بڑھتے ہوئے رجحان پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے، واضح کیا کہ آزادی اظہار رائے کی آڑ میں توہینِ آمیز رویہ کسی صورت قابل برداشت نہیں۔

بعد ازاں وزارت خارجہ میں پاکستان اور ایران کے مابین وفود کی سطح پر مذاکرات ہوئے،پاکستانی وفد کی قیادت وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی جبکہ ایرانی وفد کی قیادت ایران کے وزیر خارجہ ڈاکٹر جواد ظریف کر رہے تھے۔ان مذاکرات میں کثیر جہتی شعبہ جات میں دو طرفہ تعاون کے میسر مواقعوں اور دونوں ممالک کے درمیان روابط کے فروغ کے حوالے سے امور کو زیر بحث لایاگیا۔ ایرانی سفارتخانے کے مطابق دونوں ملکوں کے درمیان دوستانہ تعلقات سرحدی اور دفاعی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

دوسری جانب آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے ایرانی وزیر خارجہ نے ملاقات کی جس میں باہمی دلچسپی کے امور، علاقائی سیکورٹی صورتحال پر تبادلہ خیا ل کیا گیا۔ آئی ایس پی آر کے مطابق بدھ کو ایرانی وزیر خارجہ جواد شریف نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے جی ایچ کیو میں ملاقات کی جس میں باہمی دلچسپی کے امور اور علاقائی سیکیورٹی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ آئی ایس پی آر کے مطابق ملاقات میں افغان امن عمل، پاک ایران بارڈر مینجمنٹ اور بارڈر مارکیٹس کے امور پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہاکہ پاک ایران تعاون سے خطے کے امن پر مثبت اثرات مرتب ہوں گے۔ آئی ایس پی آر کے مطابق ایرانی وزیر خارجہ نے علاقائی امن و استحکام کے لئے پاکستان کے مثبت کردار کو سراہا۔ جواد ظریف نے کہاکہ بالخصوص افغان امن عمل میں پاکستان کا کردار لائق تحسین ہے۔ 

Share this story

Leave a Reply