لیڈر لوگ

Share this story

لیڈر لوگ

ہارون الرشید

 

تاریخ یہ کہتی ہے کہ بہترین صلاحیت آزادی میں بروئے کار آیا کرتی ہے، تقلید یا غلامی میں نہیں۔ الحذر، ان لیڈروں سے سو بار الحذر، جوہمارے اعمال نے ہم پر مسلط کر دئیے۔ یارب ان سے ہمیں نجات دے۔ دہراتا ہوں کہ عقل کبھی تنہا نہیں ہوتی، منفی یا مثبت ہمیشہ اس کے ساتھ کوئی دوسرا جذبہ لگا ہوتا ہے۔

دہراتا ہوں کہ سب سے اہم چیز حسنِ نیت ہے۔ حکمت عملی وہی کامیاب ہوتی ہے، جس کے پیچھے خلوص کارفرما ہو۔ مکرر عرض ہے کہ دین اور سیاست، زندگی کے دو اہم ترین شعبوں کو ہم نے ادنیٰ لوگوں پہ چھوڑ رکھا ہے۔ قرآن و سنت اور عصری حقائق کا مطالعہ ہمیں خود کرنا ہوگا۔ ہر شخص کے سر میں 1300 سی سی کا دماغ ہے اور ہر ایک کو لازم ہے کہ انفس و آفاق کی نشانیوں سے، خود اپنے خالق تک پہنچے۔

لیڈروں کی یہ ہیجان کی ماری پوری کھیپ ناکام ہو چکی۔ راہِ راست پہ رکھنے کے لیے ہمیں ان پر مسلسل دبائو ڈالنا ہوگا یا ان سے نجات حاصل کرنا ہوگی۔ پھرسے یہ گزارش ہے کہ نہ صرف درجات علم کے ساتھ بلکہ ادراک ہی سے گرہیں کھلتی ہیں۔ آدمی اپنے زمانے میں زندہ رہتا ہے اور دانا وہ ہے، جو اپنے عصر کو جانتا ہو۔ جدید ٹیکنالوجی اور جدید علم ہی کی نہیں، ہمیں نئی سیاست کی بھی ضرورت ہے۔ شخصیت پرستی نے ہمیں مار ڈالا۔ خود کو ہم ان لیڈروں پہ نہیں چھوڑ سکتے، جو اپنی اغراض کے بندے ہیں، لالچ کے مارے، خوف سے دوچار۔ ماضی سے جوسیکھتے نہیں، مستقبل میں جھانک نہیں سکتے۔

قیامِ لندن اور جرمنی کے علاوہ بیسویں صدی کے عظیم مفکر کے تین سفر اہمیت کے حامل ہیں، سپین، افغانستان ا ور ٹیپو سلطان کی وراثت کا مطالعہ۔ ایک صدی ہوتی ہے، جب اقبال میسور گئے اور واپسی پر کئی نظمیں لکھیں۔ ان میں سے ایک ٹیپو کی وصیت ہے

روزِ ازل مجھ سے یہ جبریل نے کہا

جو عقل کا غلام ہو، وہ دل نہ کر قبول

یہ اپنی ذات کے اسیر ہیں۔ ایک بھی نہیں، جو عصری تہذیبوں کو سمجھتا ہو، بھارت، چین، یورپ اور امریکہ کو جن کا ہمیں سامناہے۔ اسلام کی علمی روایت سے جوواقف ہو، جس نے مغرب کے سیکولرازم کا تفصیل سے مطالعہ کیا ہو، جدید معیشت کا جو پورا ادراک رکھتا ہو۔ جس پر یہ راز آشکار ہو کہ قدیم دنیا کی اچھی حکومتیں بھی وہ تھیں، جو سول ادارے تعمیر کر سکیں۔ امیر تیمور اور ظہیر الدین بابر کی اولاد، اصلاً جو ترک تھے لیکن مغل کہلائے۔ اقبالؔ نے کہا تھا:

ترکانِ عثمانی سے کچھ کم نہ تھے ترکانِ تیموری

عثمانی ترک، ٹی وی ڈراموں سے نہیں سمجھے جا سکتے۔ نوازشریف نے طیب اردوان سے کہا کہ وہ ترک ڈرامہ”میرا سلطان” دیکھتے ہیں۔ جواب میں ترک لیڈر نے صرف ایک لفظ کہا “بکواس”۔ تاریخ کو عمیق مطالعے سے سمجھا جاتا ہے۔ کارناموں اور ناکامیوں پر غورو فکر سے۔ بدترین غلطیوں کے باوجود اور اول اول، ایک نظام وضع کرنے کے بعد، جس میں بادشاہ کے اختیارات محدود تھے، سلطان سلیم کے دور میں، پھر سے بادشاہ کو دیوتا بنایا گیا، وگرنہ ترک وہ تھے، جنہوں نے الپ ارسلان، سلطان محمد فاتح اور سلیمان عالی شان ایسے تاریخ ساز حکمران پیدا کیے۔ الپ ارسلان نے محمود غزنوی ہی کی وراثت سنبھالی، میاں محمد نوازشریف محمود کے بھائی مسعود سے مشابہت رکھتے ہیں۔ جنوب سے خطرہ امنڈتا تو شمال کا رُخ کرتا۔ ارسلان بغداد کی زوال پذیر خلافت کا متبادل بھی بنا۔ وہ نہ ہوتا تو ایک ہزار برس پہلے مسلمان زوال کا شکار ہو جاتے۔ سلطان محمد فاتح، مسلم تاریخ کے سب سے زیادہ بابرکت حکمرانوں میں سے ایک ہے۔ اللہ کے آخری رسولؐ نے دو لشکروں کے لیے جنت کی بشارت دی تھی۔ ایک وہ جو قسطنطنیہ کو فتح کرے اور دوسرا وہ جو غزوہ ہند میں ظفر مند ٹھہرے گا۔ قسطنطنیہ کو سلطان محمد فاتح نے زیر کیا۔ غزوہ ہند کی بشارت مسلم برصغیر کے مقدر میں ہے۔ فرمایا تھا: ہند کے مسلمان اول اس کے مشرکوں کو زیر کریں گے، پھر دمشق میں یہودیوں کے خلاف ابنِ مریمؑ کا ساتھ دیں گے۔ رحمۃ اللعالمین ؐنے جب یہ بشارت دی تو ایک بھی ہندی اور ایک بھی ترک مسلمان نہ تھا۔ کیا یہ محض اتفاق ہے کہ آج عالم اسلام میں پیشہ ورانہ مہارت کی حامل دو ہی افواج ہیں، ایک پاکستانی، جو مغرب کا ہدف ہے اور بھارت کا بھی۔ دوسری ترک فوج۔ اللہ کی شان کہ مصطفی کمال اتاترک نے، جو سیکولر نہیں، مذہب دشمن تھا، فوج کو ملک سونپ دیا تھا۔ مغرب سے دائمی رفاقت کا پیمان کیا تھا اور لادینی خطوط پر چلانے کے لیے، سیاست کو آہنی خول پہنایا تھا، مگر اس نے رہائی پا لی۔ اب ترک فوج تشکیلِ نو کے مراحل سے گزر رہی ہے۔

یہی ترک تھے، جن کے شہسواروں نے سرما کی شدت سے بچنے کے لیے پہلی بار نکٹائی پہنی۔ وہی تھے، جنہوں نے پہلی بار پتلون پوش باوردی فوج بنائی۔ پینٹالون ترکی زبان کا لفظ ہے۔ ترک ہی تھے، سپین کے بعد جنہوں نے ایک زمانے میں بہترین عدالتیں قائم کیں۔

ان دانشوروں کو کیا کہیے، جو مذہبی طبقے اور مذہب میں امتیاز نہیں کرتے۔ سیاست ایک فن ہے۔ اللہ کے آخری رسولؐ نے ارشاد کیا تھا: بنی اسرائیل کے انبیاؑ سیاست کیا کرتے۔ مسلم برصغیر نے جناح جیسا سیاسی عبقری جنا، جن سے عرب و عجم کی سیادت کا دعویٰ کرنے والے ہار گئے۔ ساٹھ ہزار بے گناہ پاکستانیوں کو قتل کرنے والے طالبان انہی علماء کی معنوی اولاد ہیں جو قیام پاکستان کے مخالف تھے، اسی لئے بھارتی اسٹیبلشمنٹ انہیں استعمال کر سکی۔ اپنی پوری تاریخ میں مسلمانوں نے علما کی سیاسی قیادت کبھی قبول نہ کی۔ وہ جو عظیم عالم تھے، وہ جانتے تھے کہ ان کا میدان فروغِ علم اور تزکیہ نفس ہے، کارِ سیاست نہیں۔ خلیفتہ الرسول ابوبکر صدیقؓ، امیر المومنین عمرؓ فاروق اعظم، امیر المومنین سیدنا عثمانؓ اور سیدنا علی ابن ابی طالب کرم اللہ وجہہ کیا مولوی تھے؟ جی نہیں، بہترین انتظامی صلاحیتوں کے حامل رہنما، عالم اور مدبر۔ جامع الصفات کہ رسول اکرمؐ نے ان کی تربیت کی تھی۔ جو بعد میں اٹھے، جناب عمر بن عبدالعزیز اور صدیوں بعد صلاح الدین ایوبی، وہ علماء نہیں، لیڈر اور مدبر تھے۔ حقیقت تو یہ ہے کہ اسلام میں مذہبی طبقے کا الگ سے وجود ہی نہیں۔ صالحین کی حکومت اور علماء کی جمعیتیں قائم کرنے والوں کو مسلمانوں نے کبھی قبول کیا اور نہ کریں گے۔

سیاستدان اور مولوی، دونوں عوام کو لوہے کی ٹوپیاں پہنا دینے کے آرزو مند ہیں۔ قیادت کے مدعی اور اطاعت کے طلب گار۔ نہیں، اسلام کا اجتماعی نظام یہ نہیں۔ اس کی بنیاد ہے۔ وَاَمْرُہُمْ شُوریٰ بَیْنَھُمْ۔ مشاورت اور حقیقی مشاورت۔ رہے سیاسی ادارے تو سرکارؐ کے عہد میں ان کی ایک شکل تھی اور فاروق اعظمؓ کے دور میں دوسری۔ قائداعظم قرآن کی حکمرانی کے علمبردار تھے۔ سب جانتے ہیں کہ وہ جھوٹ اور ریا سے پاک تھے۔ سب جانتے ہیں کہ قیام پاکستان سے پہلے انہوں نے اخبار نکالا، انشورنس کمپنی، بینک اور ایئرلائن قائم کرنے کے انتظامات کیے۔ ممبئی اور گجرات کے کاروباریوں کو کراچی لائے۔

نوازشریف پنجابی اور پنجابیوں میں سے بھی کشمیری اس کی ترجیح، زرداری صاحب سندھی، الطاف حسین مہاجر، محمود اچکزئی، اسفندیار اور مولانا فضل الرحمن فرقہ ورانہ تعصب کا شکار۔ لیڈر وہ شخص ہوتا ہے، جو معاشرے کی تقسیم اور تعصبات سے بلند ہو۔ عمران خاں کی طرح خود کو جو دیوتا نہ سمجھتا ہو۔ پارٹی، جس میں سبھی طبقات شامل ہوں۔ کامیاب ہو کر بھی طالبان ناکام ہوں گے۔ ایرانی انقلاب سمٹ رہا ہے۔

فاروق اعظمؓ کا جملہ یاد آتا رہا: لوگوں کو ان کی مائوں نے آزاد جنا تھا، تم کب سے انہیں غلام بنانے لگے۔ تاریخ یہ کہتی ہے کہ بہترین صلاحیت آزادی میں بروئے کار آیا کرتی ہے، تقلید یا غلامی میں نہیں۔ الحذر، ان لیڈروں سے سو بار الحذر، جوہمارے اعمال نے ہم پر مسلط کر دئیے۔ یارب ان سے ہمیں نجات دے۔

Share this story

Leave a Reply