پاکستان علاقائی امن کو خطرے سے دوچار کرنیوالے کسی اقدام کی اجازت نہیں دیگا: معید یوسف

Share this story

قومی سلامتی کے بارے میں وزیراعظم کے خصوصی معاون ڈاکٹر معید یوسف نے کہا ہے کہ بھارت غیرقانونی زیرقبضہ جموں و کشمیر میں مشکل صورتحال سے دوچار ہے اور اسے اب خود سمجھ نہیں آ رہی کہ ان حالات سے نکلنے کے لئے کیا کرے۔

انہوں نے اسلام آباد میں اے پی پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بھارت کا گزشتہ سال پانچ اگست کا اقدام اس کو مہنگا پڑا ہے اور وہ ہر لحاظ سے کشمیر کھو چکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت کو اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیریوں کو ان کا جائز حق خودارادیت دینے کے لئے استصواب رائے کراناہو گا کیونکہ اس مسئلے کا کوئی دوسرا قابل عمل حل نہیں۔

ڈاکٹر معید نے زور دیا کہ اگر بھارت کشمیر کے بارے میں مذاکرات کے آغاز میں سنجیدہ ہے تو پاکستان کی جانب سے طے کردہ پیشگی شرائط بھارت کے ساتھ کسی بھی مذاکراتی عمل کا اہم حصہ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بھارت افغان سرزمین کو پاکستان کے خلاف استعمال کررہا ہے اور غلط فہمیاں پیداکر رہا ہے مگر اب پاکستان نے صورتحال کو بہتر کرلیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ افغان قیادت کو سمجھ آگئی ہے کہ پاکستان ہی بین الافغان مذاکرات کو موجودہ سطح تک لانے میں مدد کرسکتا ہے اور ان کی بامقصد تکمیل میں معاونت کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان ایک ذمہ دار ملک ہے اور علاقائی امن اور سلامتی کو خطرے سے دوچار کرنے کی اجازت نہیں دے گا۔ معید یوسف نے کہا کہ اگر بھارت نے ہمیں آزمانے کی کوشش کی تو گزشتہ سال سے بڑا جواب دیا جائے گا۔

Share this story

Leave a Reply