کورونا وائرس: پاکستان میں 180 سے زیادہ مریض، عمران خان کا قرض معاف کرنے کا مطالبہ

Share this story

پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ کورونا وائرس کے پھیلاؤ کی صورت میں پاکستان کے پاس نہ تو اس سے نمٹنے کی صلاحیت ہے اور نہ ہی اس کام کے لیے وسائل موجود ہیں۔

امریکی جریدے بلومبرگ کو دیے گئے ایک انٹرویو میں پاکستان کے وزیراعظم نے کہا کہ کورونا غریب ممالک کے لیے تباہ کن ثابت ہو سکتا ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ ’اگر یہ وائرس پھیلا تو ہم سب کو صحت کی سہولیات کی کمی کا سامنا ہو گا۔۔۔ ہمارے پاس اس سے نمٹنے کی صلاحیت نہیں ہے، ہمارے پاس وسائل نہیں ہیں۔’

عمران خان کے مطابق پاکستان کی ‘صحت سے متعلق سہولیات کورونا وائرس کا مقابلہ کرنے کے لیے ناکافی ہیں۔ یہ صرف پاکستان ہی نہیں، میرے خیال میں انڈیا، خطے کے دیگر ملکوں اور افریقی ممالک میں بھی یہی صورتحال ہو گی۔’

انھوں نے بین الاقوامی برادری سے مطالبہ کیا کہ ہے وہ اس صورتحال کے پیش نظر ترقی پذیر ممالک کے لیے قرضوں کی معافی جیسے اقدامات کے بارے میں سوچیں۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ ’معیشت پر سست روی کے اثرات کو دیکھتے ہوئے انھیں سب سے زیادہ تشویش غربت اور بھوک پر ہے۔ اس صورتحال کے پیش نظر میرے خیال میں عالمی برادری کو ہمارے جیسے ممالک کے لیے قرضوں کی معافی جیسے اقدامات کےبارے میں سوچنا چاہیے، جو بہت خطرات سے دوچار ہیں۔ یہ ہمیں کم از کم اس سے نمٹنے میں مدد فراہم کرے گا۔’

انھوں نے ایران کا خاص ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ‘میں ایران میں جو کچھ ہو رہا ہے اُس کی وجہ سے ڈرا ہوا ہوں کیونکہ ایران پر عائد پابندیوں نے پہلے ہی اُنھیں غربت سے دوچار کر دیا ہے اور اُس کے اوپر یہ وائرس ہے۔’

ان کے مطابق یہ ایک واضح مثال ہونی چاہیے کہ جہاں کم از کم طور پر ایران پر عائد پابندیوں کو اٹھا لیا جانا چاہیے، کیونکہ وہاں کے لوگ یقیناً بہت برے حالات میں ہوں گے۔

عمران خان کا یہ بیان ایک ایسے وقت سامنے آیا ہے جب پاکستان میں گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کے مریضوں کی تعداد میں تین گنا اضافہ ہوا ہے۔

پاکستان میں کورونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثرہ صوبہ سندھ میں کووڈ-19 کے نئے مریض سامنے آنے کے بعد ملک میں اس وائرس کے مریضوں کی تعداد 183 تک پہنچ گئی ہے۔

سندھ کے محکمۂ صحت کے حکام کے مطابق صرف اسی صوبے میں اب تک 150 افراد میں اس وائرس کی تصدیق ہوئی ہے جبکہ خیبر پختونخوا میں بھی حکام نے 15 افراد میں اس وائرس کی موجودگی کی تصدیق کی ہے۔

اس کے علاوہ پیر تک کے وفاقی اعدادوشمار کے مطابق سندھ اور خیبر پختونخوا کے علاوہ بلوچستان میں 10، اسلام آباد میں چار، گلگت بلتستان میں تین اور لاہور میں ایک مریض موجود ہے۔

قومی ادارہ برائے صحت کی جانب سے فراہم کردہ اعدادوشمار کے مطابق ملک میں پیر تک صرف 833 افراد کے ہی کورونا ٹیسٹ کیے گئے ہیں۔

کورونا
تصویر کے کاپی رائٹGETTY IMAGES

سندھ سب سے زیادہ متاثرہ صوبہ

پاکستان میں اس وقت صوبہ سندھ اس وائرس سے سب سے زیادہ متاثرہ علاقہ ہے جہاں اب تک 150 افراد میں کووڈ-19 وائرس کی تصدیق کی جا چکی ہے۔

صوبہ سندھ کے محکمہ صحت کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق ان میں سے 148 افراد زیرِ علاج ہیں جبکہ دو مکمل صحت یاب بھی ہو چکے ہیں۔

حکام کے مطابق سندھ میں سب سے متاثرہ شہر اب سکھر بن چکا ہے جہاں 119 افراد میں اس وائرس کی تشخیص ہوئی ہے۔ یہ تمام افراد ایران سے پاکستان واپس آئے ہیں۔

اس کے علاوہ مریضوں میں سے 30 کا تعلق کراچی سے ہے جبکہ ایک مریض حیدرآباد میں سامنے آیا ہے۔

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے پیر کو ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ پیر کو سکھر میں موجود مزید ایسے افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی ہے جو ایران سے پاکستان آمد کے بعد تفتان میں بنائے گئے قرنطینہ میں وقت گزارنے کے بعد اپنے آبائی علاقوں کو بھیجے گئے تھے۔

مراد علی شاہ نے بتایا کہ اتوار کو تفتان سے آنے والے 50 افراد میں اس وائرس کی تشخیص ہوئی جبکہ صوبائی محکمۂ صحت کی ترجمان کے مطابق پیر کو مزید 26 افراد میں اس وائرس کی تصدیق ہو چکی ہے۔

کراچی کے متاثرین کی معلومات فراہم کرتے ہوئے مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ صوبائی دارالحکومت اور حیدرآباد میں جن 27 افراد میں وائرس کی تشخیص ہوئی ان میں سے آٹھ شام، تین دبئی، تین ایران، پانچ سعودی عرب، ایک قطر اور ایک کوئٹہ سے کراچی آیا تھا جبکہ پانچ کیس مقامی منتقلی کے ہیں۔

پاکستان
تصویر کے کاپی رائٹGETTY IMAGES

مراد علی شاہ کا یہ بھی کہنا تھا کہ صوبائی حکومت کے پاس عوامی سطح پر کورونا کے ٹیسٹ کرنے کی استعداد نہیں ہے اور اسی لیے صرف اب تک سندھ میں 394 افراد کے ہی ٹیسٹ کیے جا چکے ہیں، جس میں سفری ریکارڈ کے حامل یا متاثرہ افراد سے براہ راست رابطے میں آنے والے افراد کو ترجیح دی گئی ہے۔

ان کے مطابق صوبائی حکومت نے دس ہزار کٹس منگوائی تھیں لیکن مسئلہ کٹس کا نہیں بلکہ ٹیسٹنگ سہولیات کا ہے۔ ‘ہم یومیہ دو سو ٹیسٹ ہی کر سکتے ہیں۔ پی سی آر مشین ایک وقت میں 45 ٹیسٹ کر سکتی ہے اور اس پورے عمل میں چھ سے آٹھ گھنٹے لگتے ہیں’۔

مراد علی شاہ کا یہ بھی کہنا تھا کہ انھیں ٹیسٹ کرنے والے تربیت یافتہ عملے کی کمی کا بھی سامنا ہے۔

سندھ میں کورونا سے بچاؤ کے اقدامات کے تحت صوبے کے تمام نجی اور سرکاری تعلیمی ادارے 31 مئی تک بند کیے جا چکے ہیں۔ اس کے علاوہ صوبے بھر میں شادی ہال، سینما گھر تین ہفتوں کے لیے بند کر دیے گئے ہیں جبکہ تمام سماجی، مذہبی، اجتماعات پر پابندی لگا دی گئی ہے۔

اسی طرح مزارات بھی آئندہ تین ہفتوں کے لیے زائرین کے لیے بند ہوں گے راہم رسموں کی ادائیگی، دھمال اور شاہ لطیف کے مزار پر گائیکی کا سلسلہ جاری رہے گا۔

خیبر پختونخوا میں 15 مریضوں کی تصدیق

صوبہ خیبر پختونخوا کے وزیرِ صحت تیمور جھگڑا کے مطابق صوبے میں تفتان سے آنے والے جن 19 افراد کے ٹیسٹ کیے گئے تھے ان میں سے 15 میں کورونا وائرس کی تصدیق ہو گئی ہے۔

پاکستان کے صوبے خیبر پختونخوا کے وزیراعلیٰ کے مشیر اطلاعات اجمل وزیر نے منگل کو پریس کانفرنس کے دوران کہا ہے کہ صوبے میں اس وقت کورونا وائرس کے 15 تصدیق شدہ مریض موجود ہیں اور یہ تمام لوگ تفتان کے راستے ایران سے پاکستان واپس آنے والے زائرین ہیں۔

کورونا وائرس پاکستان
تصویر کے کاپی رائٹGETTY IMAGES

ان کے مطابق اب تک صوبے میں جن 65 افراد کے ٹیسٹ کیے گئے ان میں سے 15 میں کورونا وائرس پایا گیا جبکہ 17 افراد کے ٹیسٹ کے نتائج آنا باقی ہیں۔

اجمل وزیر نے یہ بھی بتایا کہ تفتان میں موجود صوبہ خیبر پختونخوا سے تعلق رکھنے والے مزید 225 افراد کو منگل کو ڈیرہ اسماعیل خان لایا جا رہا ہے اور صوبائی حکومت نے اُن تمام افراد کو قرنطینہ میں رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ صوبائی حکومت نے کورونا وائرس کی صورتحال کے پیش نظر صوبے میں 50 سال سے زائد عمر کے سرکاری ملازمین کو 15 دن کی چھٹی دے دی ہے جبکہ حاملہ اور دیگر سنگین امراض میں مبتلا سرکاری ملازمیں کو بھی 15 یوم کی رخصت دی گئی ہے۔

انھوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے یہ بھی فیصلہ کیا ہے کہ صوبے کی جیلوں میں قید افراد کی سزاؤں میں 2 ماہ کی کمی کی جائے گی۔

اجمل وزیر کا کہنا تھا کہ ڈیرہ اسماعیل خان شہر کے مفتی محمود ہسپتال میں 200 افراد کے لیے قرنطینہ قائم کیا گیا ہے۔ جبکہ صوبے بھر میں 1000 افراد کو قرنطینہ میں رکھنے کے انتظامات کرلئے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا ہے صوبے کے 26 ہسپتالوں میں قرنطینہ مراکز قائم کیے گئے ہیں جبکہ 20 مزید ہسپتالوں میں بھی ضرورت کے پیش نظر قرنطینہ کے انتظامات مکمل ہیں۔

خیبر پختونخوا کی صوبائی حکومت نے کورونا وائرس کے پھیلاؤ کے خدشے کے پیشِ نظر 15 روز کے لیے تعلیمی ادارے بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس کے علاوہ سیاسی اور عوامی اجتماعات پر پابندی لگانے،ہاسٹل بند کرنے اور جیلوں میں قیدیوں سے ملاقاتیں معطل کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے۔

تفتان
تصویر کے کاپی رائٹGETTY IMAGES
تفتان میں قرنطینہ کے لیے لگائے گئے کیمپس

بلوچستان میں قرنطینہ کے مسائل

صوبہ بلوچستان میں جہاں اب تک سرکاری اعدادوشمار کے مطابق 11 افراد میں کورونا وائرس کی تشخیص ہو چکی ہے وہیں صوبے کے ایران سے متصل سرحدی شہر تفتان میں قائم کیے گئے قرنطینہ پر بھی سوال اٹھنے لگے ہیں۔

حکومت بلوچستان کے ترجمان لیاقت شاہوانی نے پیر کے روز بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ اس وقت تفتان کے مقام پر 2900 زائرین کو قرنطینہ میں رکھا گیا ہے جبکہ 500 افراد کو کوئٹہ میں موجود قرنطینہ مراکز میں منتقل کیا گیا ہے۔

تفتان کے قرنطینہ میں رکھے گئے افراد کو جب ان کے آبائی علاقوں میں بھیجا گیا ہے تو وہاں کیے گئے ٹیسٹ میں ان میں وائرس کی تشخیص ہوئی ہے۔

پیر کو وزیرِاعلٰی سندھ نے کہا ہے کہ انہوں نے فیصلہ کیا ہے کہ تفتان میں قرنطینہ میں 14 روز گزارنے کے بعد سندھ بھیجے جانے والے تمام افراد کو دوبارہ قرنطینہ میں رکھا جا رہا ہے کیونکہ تفتان میں قرنطینہ کی سہولیات ناکافی ثابت ہوئی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ تفتان میں موجود افراد میں سے سب سے پہلے 853 افراد کا تعلق سندھ سے بتایا گی تھا اور کہا گیا تھا کہ ان کا ٹیسٹ کیا گیا ہے اور قرنطینہ میں بھی رکھا گیا ہے جس کے بعد وہاں سے سکھر پہنچنے والے افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق صوبائی حکومت کے لیے تشویش ناک تھی۔

سید مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ تفتان سے آئندہ ایک، دو روز میں مزید 664 افراد سندھ میں لائے جائیں گے جن کے لیے یہی طریقۂ کار اختیار کیا جائے۔

حکومت بلوچستان نے عوام کو موبائل فون پر کورونا وائرس سے متعلق آگاہی فراہم کرنے کا اعلان بھی کیا ہے۔

ایک اعلامیے کے مطابق روزانہ تین لاکھ سے زیادہ لوگوں کو موبائل پر پیغامات کے ذریعے کورونا وائرس کے اثرات اور احتیاطی تدابیر سے متعلق آگاہی فراہم کی جائے گی۔

افغانستان سے متصل بلوچستان کے ضلع قلعہ عبداللہ کے سرحدی شہر چمن میں لوگوں کی سکریننگ کے لیے اقدامات کے علاوہ چمن میں محدود پیمانے پر قرنطینہ مرکز قائم کرنے کے علاوہ آئسولیشن سینٹر بھی قائم کیا گیا ہے جبکہ محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے وہاں 1500 افراد کے لیے قرنطینہ قائم کرنے کے لیے اقدامات جاری ہیں۔

کورونا
تصویر کے کاپی رائٹGETTY IMAGES

پنجاب میں کورونا وائرس کا ایک مریض، قرنطینہ تیار

پاکستان کے سب سے بڑے صوبے پنجاب میں سرکاری اعدادوشمار کے مطابق تاحال اس وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد ایک ہی ہے۔

اس 54 سالہ مریض کا تعلق لاہور سے بتایا گیا ہے اور یہ 10 مارچ کو ہی برطانیہ سے واپس لوٹا تھا۔

حکام کے مطابق مریض سے براہ راست رابطے میں آنے والوں کو گھر میں ہی آئسولیشن میں رکھا جا رہا ہے اور اس دورانیے کے دوران تمام افراد کی نگرانی کی جائے گی اور علامات ظاہر ہونے پر دوبارہ ٹیسٹ کروائے جائیں گے۔

صوبائی حکومت نے جمعرات کو اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے صوبے بھر میں طبی ایمرجنسی نافذ کر دی تھی۔ حکام کے مطابق اب تک تین ہزار چینی باشندوں جبکہ ایران سے آنے والے چار ہزار زائرین کی سکریننگ کی گئی ہے۔

حکام کے مطابق ڈیرہ غازی خان میں درازندہ کے مقام پر ایک قرنطینہ مرکز بھی قائم کیا گیا ہے جہاں تفتان میں قرنطینہ میں مقررہ مدت گزارنے کے بعد پنجاب میں داخل ہونے والے 780 زائرین کو دوبارہ داخل کیا گیا ہے جہاں ان کے کورونا ٹیسٹ کیے جا رہے ہیں۔

پاکستان نے کیا اقدامات کیے ہیں؟

کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کی غرض سے ملک بھر میں تمام تعلیمی اداروں کو بند، فوجی پریڈ کو منسوخ، پاکستان کی سرحدوں کو پندرہ روز تک مکمل بند اور بین الاقوامی پروازوں کو محدود کرنے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔

کورونا وائرس پاکستان
تصویر کے کاپی رائٹGETTY IMAGES

کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے پاکستان نے پیر کو افغانستان، ایران اور انڈیا کے ساتھ اپنی سرحدیں بند کر دی ہیں۔

نامہ نگار عزیز اللہ خان کے مطابق پاک افغان سرحد طور بارڈر کو پیر اور اتوار کی درمیانی شب ہر قسم کی آمدورفت کے لیے بند کر دیا گیا۔ حکام کے مطابق روزانہ سات ہزار کے لگ بھگ افراد یہ سرحد عبور کرتے ہیں اور دونوں ممالک کے درمیان تجارت کا بڑا راستہ بھی یہی ہے۔

شمالی وزیرستان کے ساتھ افغانستان کی سرحد غلام خان اتوار چھ بجے بند کر دی گئی تھی۔ غلام خان سرحد افغانستان کے علاقے خوست سے ملتی ہے اور خیبر پختونخوا میں افغانستان کے ساتھ ملنے والی یہ دوسری بڑی سرحد ہے۔

حکام کے مطابق جنوبی وزیرستان کے ساتھ افغانستان کی سرحد انگور اڈا کو وزارت داخلہ کے نوٹیفیکیشن کے فوری بعد سنیچر کے روز ہی بند کر دیا گیا تھا۔

یہ سرحد افغانستان کے ساتھ ملنے والے ان چند راستوں میں سے ایک تھی جہاں سے آمدورفت آسان تھی لیکن کچھ عرصہ قبل اس سرحد پر دونوں ممالک کے درمیان کشیدگی بڑھ گئی تھی، جس کے بعد یہ سرحد دن کے وقت کھلی جبکہ رات کو بند کر دی جاتی تھی۔ اس سرحد سے اب لوگوں کی آمدورفت کافی حد تک محدود ہو چکی تھی۔

ضلع کرم کے ساتھ افغانستان کی سرحد خرلاچی کو پیر سے ہر قسم کی آمدورفت کے لیے بند کیا ہے۔ ضلع کرم کی انتظامیہ کے مطابق یہ سرحد 30 مارچ تک بند رہے گی جس کے بعد اس بارے میں فیصلہ کیا جائے گا۔ اس سرحد سے کوئی زیادہ آمدورفت ریکارڈ نہیں کی جاتی تاہم دونوں جانب کے مقامی قبائل اس سرحد کو اپنی ضروریات کے تحت استعمال کرتے ہیں۔

چترال اور گلگت بلتستان کے ساتھ ملنے والی شندور سرحد اس وقت توجہ کی مرکز ہے۔ چترال میں ڈاکٹروں نے حکومت کی توجہ اس طرف مبذول کرائی ہے کہ شندور کے مقام پر راستہ کھلنے کی وجہ سے لوگ اس طرف اس موسم میں آتے ہیں اور ان کی سکریننگ ضروری ہے۔

کورونا وائرس پاکستان
تصویر کے کاپی رائٹGETTY IMAGES

پاکستان اور انڈیا کے درمیان واہگہ کے مقام پر آمدورفت معطل کر دی گئی ہے۔ اس سرحد کی بندش کا فیصلہ انڈیا کی حکومت نے کیا ہے۔ یہ سرحد 15 مارچ سے بند کی گئی ہے۔ اسی طرح کرتار پور راہداری کو بھی بند کر دیا گیا ہے۔

پاکستان نے کرتارپور راہداری پاکستانیوں کے لیے بند جبکہ انڈیا سے آنے والے افراد کے لیے کھلے رہنے کے لیے کہا تھا لیکن انڈیا کی جانب سے یہ سرحد بھی بند کر دی گئی ہے۔

کوئٹہ سے نامہ نگار محمد کاظم نے بتایا کہ بلوچستان میں پاکستان کی سرحد ایک جانب ایران سے تو دوسری طرف افغانستان سے ملتی ہے، جس میں مختلف مقامات پر آمدورفت ہوتی ہے۔

ایران میں کورونا کی وبا پھیلنے اور افغانستان میں کیسز رپورٹ ہونے کے بعد بلوچستان سے دونوں ممالک کے ساتھ سرحدی علاقوں میں ایمرجنسی نافذ کرنے کے علاوہ دونوں ممالک کے ساتھ سرحدوں کو بند کیا گیا ہے۔

افغانستان کے ساتھ جو سرحدی اضلاع واقع ہیں ان میں ژوب ، قلعہ سیف اللہ، پیشن ، قلعہ عبد اللہ ، نوشکی اور چاغی شامل ہیں جبکہ ایران کے ساتھ چاغی کے علاوہ واشک ، پنجگور ، کیچ اور گوادر کے اضلاع کی سرحدیں لگتی ہیں ۔

Source: BBC Urdu
Share this story

Leave a Reply