سعودی حکومت نے کمپنیوں کو پاکستانی محنت کشوں کی برطرفی سے روک دیا

Share this story

اسلام آباد: سعودی عرب نے 3 ماہ تک کمپنیوں کو پاکستانی محنت کشوں کی برطرفی سے روکنے کا حکم دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس دوران تمام ملازمین کو تنخواہ کی ادائیگی کا سلسلہ جاری رکھا جائیگا۔

پاکستانی محنت کشوں کو درپیش مسائل پر حکومت اور سعودی عرب حکام کے درمیان اہم رابطے جاری ہیں۔ اس ضمن میں زلفی بخاری نے سعودی وزیر برائے افرادی قوت عبداللہ بن نصیر سے ویڈیو لنک پر اہم رابطہ کرکے پاکستانی مزدور اور لیبر کمیونٹی کو درپیش مسائل اور ممکنہ حل پر تفصیلی مشاورت کی۔

زلفی بخاری نے ان سے درخواست کی کہ مشکل گھڑی میں ہم وطنوں کی ہر قسم کی ضروریات پوری کرنا چاہتے ہیں، سعودی حکام پاکستانی مزدوروں سے تعاون بڑھائیں۔ انہوں نے پاکستانیوں کی وطن واپسی کیلئے خصوصی اقدامات کی بھی درخواست کی۔

سعودی وزیر برائے افرادی قوت عبداللہ بن نصیر نے زلفی بخاری کی درخواست پر بڑا فیصلہ کرتے ہوئے انٹری اور ایگزٹ ویزے کی مدت بڑھانے کا اعلان کر دیا ہے۔ دسمبر تک پاکستانی مزدوروں کے ویزوں کی توسیع بالکل مفت ہوگی۔

انہوں نے بتایا کہ سعودی حکومت نے 3 ماہ تک کمپنیوں کو پاکستانی محنت کشوں کی برطرفی سے روکنے کا اعلان کیا ہے۔ سعودی کمپنیاں آئندہ 3 ماہ تک محمت کشوں کو ملازمت سے برطرف نہیں کریں گی، اس دوران تمام ملازمین کو تنخواہ کی ادائیگی کا سلسلہ جاری رکھا جائیگا۔

سعودی وزیر نے کہا کہ اب تک بر طرف ملازمین سے بھی تعاون کیا جائیگا جبکہ پاکستانی محنت کشوں کو مکمل تنخواہ اور بقایا جات کی ادائیگی یقینی بنائی جائیگی۔

معاون خصوصی زلفی بخاری نے بھرپور تعاون کی یقین دہانی پر سعودی وزیر سے اظہار تشکر کیا۔ دونوں رہنماؤں نے مشکل وقت میں دوطرفہ تعاون مزید مضبوط بنانے پر اتفاق کیا جبکہ فلائٹ آپریشن جلد شروع کرنے پر بھی بات چیت کی گئی۔ فیصلہ کیا گیا کہ مشکل صورتحال میں دونوں ممالک رابطے جاری رکھیں گے۔

Source Dunya News

Share this story

Leave a Reply