ایف اے ٹی ایف کا اجلاس شروع، پاکستان سے متعلق فیصلہ 25 فروری کو ہو گا

Share this story

اسلام آباد — عالمی سطح پر منی لانڈرنگ اور دہشت گردی کی مالی معاونت کے تدارک کی نگرانی کرنے والے ادارے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) کا اجلاس فرانس کے دارالحکومت پیرس میں شروع ہو گیا ہے جس میں پاکستان کے لیے تجویز کردہ ایکشن پلان پر عملدرآمد کا جائزہ لیا جائے گا۔

عالمی تنظیم کے 22 سے 25 فروری تک جاری رہنے والے اجلاس میں پاکستان کو گرے لسٹ سے نکالنے یا برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا جائے گا۔

پاکستان کے حکام پرامید ہیں کہ اٹھائے گئے اقدامات کے نتیجے میں اسے گرے لسٹ سے نکال دیا جائے گا۔

تاہم تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ عالمی سیاست کی ضروریات کے تحت پاکستان کی قابلِ قدر کارگردگی کے باوجود پابندی کی فہرست میں برقرار رکھا جاسکتا ہے۔

پاکستان کے مالیاتی اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ماہرین پر مشتمل وفد وفاقی وزیر حماد اظہر کہ سربراہی میں ویڈیو لنک کے ذریعے ایف اے ٹی ایف اجلاس کو اپنے اقدامات سے آگاہ کرے گا۔

پاکستانی حکام کا کہنا ہے کہ ایف اے ٹی ایف کے ایکشن پلان پر عملدرآمد کی کارکردگی اطمینان بخش ہے اور اٹھائے گئے اقدامات کے نتیجے میں گرے لسٹ سے نکلنے کے لیے پرامید ہیں۔

پاکستان کے دفتر خارجہ کے ترجمان حفیظ چوہدری کہتے ہیں کہ وہ پر امید ہیں کہ ایف اے ٹی ایف پاکستان کے اقدامات کو سراہے گا۔

دفتر خارجہ کی ہفتہ وار بریفنگ کے دوران ان کا کہنا تھا کہ ایف اے ٹی ایف تسلیم کر چکا ہے کہ پاکستان نے 27 میں سے 21 نکات پر پہلے سے عملدرآمد مکمل کررکھا ہے جبکہ بقیہ چھ نکات پر قابلِ قدر پیش رفت ہو چکی ہے جسے تنظیم کے ممبران کی جانب سے سراہا جارہا ہے۔

More on this story from VOA Urdu

Share this story

Leave a Reply