ستارہء سحری ہم کلام کب سے ہے

Share this story

ستارہء سحری ہم کلام کب سے ہے

ہارون الرشید

 

اللہ کا وعدہ یہ ہے کہ خلوص اور حکمت کبھی پسپا نہیں ہوتے۔ پھر یہ کہ راہِ محبت میں پہلا قدم ہی شہادت کا قدم ہوتاہے۔

کہاں گئے شب فرقت کے جاگنے والے

ستارہء سحری ہم کلام کب سے ہے

اورنگ زیب عالمگیر نے تلوار نیام میں ڈالی اور بسترِ مرگ پر لیٹ گیا۔ چالیس سال تک اسی تلوار کے دستے پر ہاتھ رکھ کر اس نے بر صغیر پر حکومت کی تھی۔ برصغیر کیا، افغانستان اور وسطی ایشیا تک۔ کوئی دن پہلے شیوا جی کا خط ملا کہ یہ تمہارے اللہ اللہ کرنے کے دن ہیں۔ شہنشاہ نے اسے لکھا: دنیا کی سب نعمتیں میں دیکھ چکا۔ بس ایک شہادت کی آرزو باقی ہے۔ یہ کہا اور شیوا جی کی طرف روانہ ہو گئے۔ افسانے بعد میں تراشے گئے۔ سیاق و سباق بدل کر مبالغہ آرائی بعد میں ہوئی۔ دو سو برس بعد اقبالؔ نے یہ کہا تھا ع

ترکش مارا خدنگِ آخریں

ہمارے ترکش کا وہ آخری تیر تھا۔ اورنگ زیب کے خطوط پڑھتے، آدمی دنگ رہ جاتاہے۔ دانش و دانائی کا ایک دریا ہے کہ نگاہ خیرہ ہو تی ہے۔ بادشاہ کا المیہ یہ تھا کہ وہ تنہا تھا۔ 1526ء میں بابر نے کنواہہ کی جنگ جیتی، اس سے پانچ صدیاں پہلے معز الدین، شہاب الدین غوری دہلی کے قلب میں مسلم اقتدار کا علم گاڑ چکا تھا۔ سات سو سالہ اقتدار نے مسلم اشرافیہ کو سہل کوش ہی نہیں، عیش پسند بنا دیا تھا۔ لذت کوش، خود غرض اور عاقبت نا اندیش۔

انحصار حکمرانوں پر ہوتاہے کہ وہ اپنے لیے جیتے ہیں یا ملک و ملّت کے لیے۔ اچھے حکمران اللہ کا انعام ہوتے ہیں اور برے حاکم قوم کے اعمال کی سزا۔ فرمانِ رسولؐ کا خلاصہ یہ ہے کہ زندہ معاشرے ہی اچھی حکومت کے مستحق ہوتے ہیں۔ اقبالؔ کہتے ہیں : نہ تھے ترکانِ عثمانی سے کم ترکانِ تیموری۔

ترکانِ عثمانی کے ساتھ بھی یہی ہوا۔ دنیا کی پہلی وردی پوش فوج اور چین کے بعد پہلی سول سروس تخلیق کرنے والے آخر آخرکو ایسے ذہنی افلاس کا شکار ہوئے کہ ہوائی جہاز کا کامیاب تجربہ روک دیا۔ چھاپے خانے کی اجازت دینے سے انکار کر دیا۔

مسلم مفکرین، بالخصوص غزالیؒ کی تعلیمات سے فیض پاکر، صلیبی جنگوں، سپین اور ترکوں کے تجربات سے سیکھ کر یورپ تحقیق اورعلم کی راہ پر گامزن ہوا۔ سائنس اور جدید علوم کی تشکیل۔ صدیوں سے چلے آتے چرچ کے شکنجے کو توڑ ڈالا۔ دلیل کو رہنما کیا، اجتماعی قیادت کا تصور ابھر آیا اور اداروں کے ذریعے سلطانیء جمہور کا عَلَم لہرانے لگا۔ مغرب کی موجودہ ترقی علم کے فروغ، قانون کی حکمرانی، احتساب کے نظام، ریاضت اور اس آزادیء اظہار کے طفیل ہے، جس کی حدود مقرر ہیں۔ اللہ کو کسی ہجوم کی ضرورت نہیں ہوتی۔ ہمارے عہد کے عارف نے کہا تھا: ایک آدمی جو خالص اور مخلص ہو، جس کی ترجیحات درست ہوں اور اللہ کے سوا جوکسی پر بھروسہ نہ کرے۔ یہ 1938ء تھا، اقبالؔ نے تہمد کے پلّو سے آنکھیں پونچھ لیں اور یہ کہا: افسوس، کوئی مخلص مسلمان نہیں ملتا۔ ان کی آواز بیٹھ گئی تھی اور کم کم ہی وہ گفتگو کیا کرتے۔ مایوسی سے البتہ کوسوں دور، ایقان کا چراغ ان کے قلب میں ہمیشہ فروزاں رہا۔ انہیں یقین تھا کہ مسلم برّصغیر کا یومِ نجات آپہنچا۔

کریں گے اہلِ نظر تازہ بستیاں آباد

مری نگاہ نہیں سوئے کوفہ و بغداد

پھر ہم نے اس رہنما کو دیکھ لیا۔ جنوبی افریقہ میں پاکستانی سفیر کو نیلسن منڈیلا سے ملاقات کرنا تھی۔ ان کے دفتر سے جواب ملا: یہ بہت ہی مشکل ہے۔ آخر کو پیغام ملا کہ ناشتے سے پہلے آجائیے۔ دنیا بھر سے مقبول ترین لیڈر کو آئے دن مدعو کیا جاتا۔ اس ملک کے لیے وہ کیسے وقت نکالتا، جو اقتصادی اور سیاسی طور پر اس کے لیے غیر اہم تھا۔ اس کے باوجود پاکستان کے ذکر پہ اساطیری لیڈر کی آنکھیں چمک اٹھیں۔ کہا: میں ضرور جاؤں گا۔ سیّد مشاہد حسین کو وہ دن آج بھی یاد ہے، جب کراچی کے ہوائی اڈے پر وہ ان کا سواگت کرنے گئے۔ افریقی لیڈر نے کہا تھا: میری آرزو یہ ہے کہ اپنے ہیرو کے مزار پر حاضر ی کے بعد دارالحکومت جاؤں، قائد اعظم کے مزار پر مو دب کھڑے رہے۔

قائد اعظم کا وصف کیا تھا، وہ جدید میں قدیم اور قدیم میں جدید تھے۔ کبھی جھوٹ نہ بولا، کبھی وعدہ نہ توڑا، کبھی خیانت کا ارتکاب نہ کیا۔ ان ابدی اصولوں کے وہ حامل تھے، جو زندگی کو بامعنی، مثبت اور ثمر خیز بناتے ہیں۔ جدید ترین بھی تھے۔ اخبار انہوں نے نکالا، فضائی کمپنی ان کی رہنمائی میں بنی، مرکزی بینک، انشورنس کمپنی۔ پارسی، بوہرہ اور میمن تاجروں کو ممبئی اور دہلی سے کراچی آنے پر آمادہ کیا۔

“پاپائیت؟” ایک ہندو اخبار نویس نے پوچھا تو ان کا جواب یہ تھا: یہ مسخرہ پن ہے۔ ہم ایک جدید مسلم ریاست تعمیر کریں گے۔ سوشلزم اور سرمایہ پرستی کی تاریکیوں میں جو ایک مثال بنے گی۔ سٹیٹ بینک کی افتتاحی تقریب میں کہا: سرمایہ دارانہ یا سوشلسٹ نہیں، ہم اسلامی اقتصادیات کے علم بردار ہیں۔ مفلسوں کے لیے زکوٰۃ اور صدقات کا دہرا حفاظتی انتظام۔ کاروبار کی مکمل آزادی مگر دولت سے محبت ہر گز نہیں۔ دنیا نہیں آخرت۔ فقط معاش نہیں، اخلاق بھی۔ چودہ صدیاں پہلے وہ زمانہ جو گزر گیا مگر مسلم اجتماعی لاشعور میں ہمیشہ زندہ رہے گا۔ غریبی میں بھی وہ اللہ والے تھے غیور اتنےکہ منعم کو گدا کے ڈر سے بخشش کا نہ تھا یاراقوم کے باپ نے کہاتھا: جاگیرداروں اور صنعت کاروں کو عامیوں کا لہو چوسنے کا موقع نہ دیا جائے گا۔ فرمایا: قرآن ہمارا دستور ہے۔ لارڈ ماؤنٹ بیٹن نے کہا: امید ہے کہ آپ اکبرِاعظم کی راہ چلیں گے تو جواب دیا: جمہوریت کا سبق ہم نے چودہ سو برس پہلے سیکھ لیا تھا۔ نوجوان اخبار نویس نے ٹھیک کہا: قائدا عظم مولوی نہیں تھے۔ اسلام میں مولوی کا کیا کام؟ مذہبی طبقہ تو زوال کے دور میں پیدا ہوتاہے۔ سیکولر بھی وہ نہیں تھے۔ پوری سیاسی زندگی میں ایک باربھی یہ اصطلاح انہوں نے برتی نہیں۔ روادار اور مکمل روادار۔ ان کے وزیرِ خارجہ کون تھے؟

کیا ایک شودر کو انہوں نے وفاقی وزارت نہ سونپی تھی؟ سیاسی لیڈر کتنا ہی عظیم ہو، کیسی ہی اخلاقی عظمت کا امین، وہ روحانی قیادت کا بدل نہیں ہوتا؛ وہ سچے تھے؛ چنانچہ خود کہا تھا: میں فقط ایک سیاستدان ہوں۔ کٹھ ملّا قائداعظم کا مخالف کیوں ہے؟ ملحد اور مغرب سے مرعوب ژولیدہ فکری کا مارا سیکولر کیوں؟ کوئی اگر غور کرے تو جان لے۔ اس کے لیے مگر مولوی اور مغرب سے نجات پا کر اللہ کی کتاب، سیرت، تاریخ اور جدید اداروں کے مطالعے کی ضرورت ہے۔ اگر یہ نہیں تو اہلِ علم کی صحبت۔

پاکستان آج بھی ایک عظیم قوت ہے۔ دنیا کی بہترین فوج، اگر بھارت کے برابر 16فیصد ٹیکس وصول کیاجائے تو معاشی طور سے پوری طرح خود کفیل۔ مگر قیادت؟ مذہب اور سیاست کو ادنیٰ ترین لوگوں پر ہم نے چھوڑ دیا۔ انکل سام اور برہمن سے حکمران اگر مرعوب ہیں تو باقی کیا؟ اصرار ہے تو مان لیتے ہیں کہ کپتان کی نیت اچھی ہوگی۔ مگر اس کی پارٹی کیا دوسری جماعتوں سے مختلف ہے؟

ملک کو نئی سیاست درکار ہے۔ نئی پارٹی نہ سہی، ایک پریشر گروپ ہی۔ وہ لوگ کہاں ہیں، جو اقتدارنہیں، فقط ملک و ملت کے لیے بروئے کار آئیں۔ ایسے لوگ ناکام ہو ہی نہیں سکتے۔ اللہ کا وعدہ یہ ہے کہ خلوص اور حکمت کبھی پسپا نہیں ہوتے۔ پھر یہ کہ راہِ محبت میں پہلا قدم ہی شہادت کا قدم ہوتاہے۔

کہاں گئے شب فرقت کے جاگنے والے

ستارہء سحری ہم کلام کب سے ہے

Share this story

Leave a Reply