سعودی عرب نے اسرائیلی تجارتی طیاروں کو اپنی فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت دے دی

Share this story

ریاض: سعودی عرب نے اپنی فضائی حدود استمال کرنی کی یہ اجازت کم لاگت والے Israir کے طے کردہ روٹ پر پہلی پرواز سے ایک رات قبل دی ہے۔

خبر رساں ادارے رائٹرز اور اسرائیلی ذرائع ابلاغ کی میڈیا رپورٹس کے مطابق، سعودی عرب کے حکام اور وائٹ ہاؤس کے سینئر مشیر جیرڈ کشنر کے مابین بات چیت کے بعد ، سعودی عرب نے متحدہ عرب امارات جانے والی اپنی فضائی حدود کو اسرائیلی ہوائی جہاز کو عبور کرنے کی اجازت دینے پر اتفاق کیا ہے۔

الجزیرہ کے مطابق جیرڈ کشنر اور مشرق وسطی کے مندوبین ایوی برکوویٹز (Avi Berkowitz) اور برائن ہک (Brian Hook) نے یہ معاملہ سعودی عرب میں مذاکرات کے لئے پہنچنے کے فورا بعد ہی اٹھایا۔ پیر کو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کے ایک عہدیدار نے رائٹرز کو بتایا ، “ہم اس معاملے کو حل کرنے میں کامیاب ہوگئے ہیں”۔

دوسری جانب سعودی اعلان کے کچھ دیر بعد ہی اسرائیلی وزیراعظم بن یامین نیتن یاہو نے سعودی عرب کا ذکر کیے بغیر بتایا کہ اب اسرائیلی پروازیں براہ راست متحدہ عرب امارات جائیں گی۔

منگل کی صبح اسرائیل کی متحدہ عرب امارات کے لئے پہلی تجارتی پرواز کی روانگی سے کچھ گھنٹے قبل معاہدے پر دستخط کیے گئے۔ Israir کی فلائٹ کا اس معاہدے کے بغیر منسوخ ہو جانے کا خطرہ تھا۔

براہ راست پروازوں کا ممکن ہونا اس سال اسرائیل اور متحدہ عرب امارات، بحرین اور سوڈان کے ساتھ معاہدے کے نتیجے میں ممکن ہوا ہے۔

 اس سے قبل سعودی عرب نے 2018 میں بھارت کی ائیر لائن کو اسرائیل جانے کے لیے اپنی فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت دی تھی۔

Share this story