نیٹو کانفرنس میں افغانستان سے فوجی انخلا پر فیصلہ نہیں ہو سکا

Share this story

نیٹو کے سیکرٹری جنرل، ژینس سٹولٹن برگ کا کہنا ہے کہ افغانستان سے نیٹو افواج کے مکمل انخلا کے حوالے سے کسی حتمی فیصلے پر نہیں پہنچ سکے ہیں۔

برسلز میں ہونے والے نیٹو کے وزرائے دفاع کا یہ اجلاس افغانستان میں امریکی اور نیٹو افواج کے موجود رہنے کے حوالے سے بہت اہم سمجھا جا رہا تھا۔ اس وقت مغربی اتحادی، نیٹو کے افغانستان میں تقریباً 10 ہزار فوجی تعینات ہیں۔

خیال کیا جا رہا ہے کہ مارچ کے وسط میں نیٹو ممالک کے وزرائے خارجہ کے اجلاس میں اس حوالے سے تمام معاملات پر اتفاق رائے ہو جائے گا۔

یاد رہے کہ گزشتہ سال 29 فروری کو قطر کے دارالحکومت دوحہ میں امریکہ اور طالبان کے درمیان ہونے والے امن معاہدے کے مطابق امریکی اور اتحادی افواج کے مکمل انخلا کے لئے 30 اپریل کی ڈیڈ لائن پر اتفاق رائے ہوا تھا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ نیٹو کے وزرائے دفاع کی میٹنگ کے بعد جاری ہونے والا اعلامیہ حیران کن نہیں ہے۔ یہ بھی خیال کیا جا رہا ہے 30 اپریل تک تمام فوجیوں کے انخلا نہ ہونے کے پیش نظر اتحادی افواج دوبارہ حملوں کی زد میں آ سکتی ہیں۔

یاد رہے کہ طالبان اور امریکہ کے درمیان امن معاہدے کے بعد سے طالبان نے امریکہ اور اس کی اتحادی افواج پر کوئی بھی حملہ نہیں کیا ہے۔

More on this story from  VOA Urdu

Share this story

Leave a Reply