• This topic is empty.
Viewing 1 post (of 1 total)

  • Author
    Posts
  • #18518
    Farhan Khan
    Participant

    واشنگٹن: امریکی کانگریس کے ارکان نے جوبائیڈن انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ افغانستان کے منجمد اثاثے اقوام متحدہ کے مناسب ادارے کو جاری کیے جائیں جبکہ طالبان کی نہیں بلکہ افغان عوام کو مدد کی جائے۔ موسم سرما افغانستان کو تباہی کی طرف دھکیل سکتا ہے۔

    کانگریس ارکان کی جانب سے امریکی وزیر خارجہ اور وزیر خزانہ کے نام خط لکھا گیا جس میں کہا گیا ہے کہ افغانستان کے عوام جن کے ساتھ ہم نے گزشتہ 20 سالوں سے جدوجہد کی ہے، وہ قحط اور معاشی تباہی کے دہانے پر ہیں اور ان کا خیال ہے کہ انسانی تباہی کی روک تھام کے لئے فیصلہ کن کارروائی کی ضرورت ہے۔

    ہمیں طالبان حکومت کی مدد کرنے کی کوئی خواہش نہیں ہے اور ہمیں یقین ہے کہ امریکہ طالبان کو قانونی حیثیت نہ دیتے ہوئے افغانستان کی امداد پر منحصر معیشت کے تباہ کن خاتمے کو روکنے میں مدد کے لیے ایک طریقہ اختیار کر سکتا ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ وہ طالبان کو نہیں بلکہ افغان عوام کو براہ راست امداد فراہم کرنے کے لیے اقدامات کی سفارش کر رہے ہیں۔

    ورلڈ فوڈ پروگرام کے مطابق افغانستان معاشی تباہی کے دہانے پر ہے اور تقریبا ایک کروڑ 84 لاکھ افغانوں کو انسانی امداد کی ضرورت ہے۔ 30 فیصد آبادی کو ہنگامی یا غذانی بحران کا سامنا ہے جس میں 20 لاکھ بچے بھی شامل ہیں۔

    یہ چیلنجز لیکویڈیٹی بحران کی وجہ سے مزید بڑھ گئے ہیں جس کی وجہ سے لاکھوں افغان تنخواہیں وصول نہیں کر سکتے۔ یہاں تک کہ بینک میں بچت کرنے والے افغان بھی کافی مقدار میں فنڈز نکالنے سے قاصر ہیں کیونکہ بینکوں اور دیگر اداروں کے پاس ڈالر ختم ہو چکے ہیں۔

    بڑھتے ہوئے معاشی اور غذائی بحران نے بڑے پیمانے پر نقل مکانی کے خدشات کو جنم دیا ہے جو خطے کو مزید غیر مستحکم کر سکتا ہے۔ ان خدشات میں مزید اضافہ صوبہ خراسان میں اسلامک اسٹیٹ کی جانب سے طالبان کی حکومت کو براہ راست چیلنج کرنے سے ہوا ہے جس سے یہ خطرہ بڑھ گیا ہے کہ ملک کے کچھ حصے انتہا پسندانہ سرگرمیوں کی محفوظ پناہ گاہیں بن سکتے ہیں، آسان الفاظ میں کہا جائے تو قحط اور نقل مکانی کے بحران سے اسلامک اسٹیٹ کے لیے ملک میں قدم جمانا آسان ہو جائے گا۔

    اسی مناسبت سے ہم سفارش کرتے ہیں کہ بائیڈن انتظامیہ منجمد افغان اثاثے اقوام متحدہ کے ایک مناسب ادارے کو جاری کرے تاکہ اساتذہ کی تنخواہیں ادا کی جا سکیں اور اسکولوں میں بچوں کو کھانا فراہم کیا جا سکے اور لڑکیاں اپنی تعلیم جاری رکھ سکیں۔ اقوام متحدہ کے اداروں نے حال ہی میں طالبان کی قیادت والی حکومت کو نظر انداز کرتے ہوئے نجی بینکوں اور موبائل خدمات کا استعمال کرتے ہوئے اساتذہ کی تنخواہوں کی ادائیگی کے لیے ایک پہل شروع کی ہے۔ بائیڈن انتظامیہ کو ان کوششوں میں مدد کرنی چاہیے۔

    بائیڈن انتظامیہ کو انسانی امداد پر موجودہ پابندیوں کی چھوٹ کو واضح کرنے کے لئے مالیاتی اداروں کو اضافی رہنمائی فراہم کرنی چاہئے۔ ایسا کرنے سے مالیاتی ادارے امریکی پابندیوں کی خلاف ورزی کے خوف کے بغیر امدادی لین دین پر کارروائی کرنے میں زیادہ آرام دہ ہو جائیں گے جبکہ انسانی امداد کے زیادہ آزادانہ بہاؤ کو یقینی بنانے کے لئے ٹارگٹڈ چھوٹ میں بھی توسیع ہوگی۔۔ مناسب نگرانی کے ساتھ نافذ کیے گئے ان اقدامات سے طالبان حکومت کی حمایت نہیں ہوگی بلکہ اس بات کو یقینی بنایا جائے گا کہ طالبان حکومت کو نظر انداز کرتے ہوئے افغانوں کو ان بنیادی خدمات تک رسائی حاصل ہو جو انہیں زندہ رہنے کے لیے درکار ہیں۔

    بائیڈن انتظامیہ کو افغان سرکاری ملازمین کو تنخواہ دینے کی کوشش کرنے والی کثیر الجہتی تنظیموں کی مدد کرنی چاہیے جن میں سے اکثریت پچھلی حکومت کی جانب سے ہولڈ اوورز کی ہے اور کئی مہینوں سے بغیر تنخواہ کے چلی گئی ہے۔ عالمی بینک نے حال ہی میں اقوام متحدہ کے اداروں کو سرکاری شعبے کی مدد کے لئے منجمد افغانستان ری کنسٹرکشن ٹرسٹ فنڈ (اے آر ٹی ایف) سے 500 ملین ڈالر میں سے ابتدائی 280 ملین ڈالر جاری کرنے پر اتفاق کیا ہے اور امریکہ کو کسی بھی تکنیکی یا پابندیوں سے متعلق رکاوٹوں کے ساتھ بینک کی مدد کرنی چاہئے۔

    بائیڈن انتظامیہ کو نہ صرف مندی روکنے بلکہ عام افغانوں کو طالبان پر انحصار کیے بغیر اپنے پاؤں پر واپس آنے کے قابل بنانے کے لئے ڈالر کی نیلامی میں سہولت فراہم کرنے کے لئے نجی افغان یا تیسرے ملک کے بینک کو نامزد کرنے کے لئے کھلے پن کا اشارہ دینا چاہئے۔

    جوبائیڈن انتظامیہ نے اگرچہ افغانستان کے لئے اقوام متحدہ کی سابقہ اپیلوں کے لئے فیاضانہ عطیات کا وعدہ کیا ہے، لیکن موسم سرما افغانستان کو تباہی کی طرف دھکیل سکتا ہے۔ توقع ہے کہ اقوام متحدہ کی آئندہ اپیل دنیا میں اقوام متحدہ کی سب سے بڑی اپیل ہوگی جس کا مطلب ہے کہ افغانستان تمام انسانی آفات میں بدترین ہوگا۔ امریکہ اور اس کے اتحادیوں کو اپنا منصفانہ حصہ ڈالنے کے لئے عطیہ دہندگان کو اکٹھا کرنے کی تیاری کرنی چاہئے۔

    افغانستان کی ناکام ریاست سے کسی کو فائدہ نہیں ہے۔ اگرچہ ہم انتظامیہ پر دباؤ ڈالتے رہیں گے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائے کہ ہم امریکی عوام کو مستقبل میں پیدا ہونے والے کسی بھی ممکنہ خطرات سے محفوظ رکھیں جو افغانستان سے پیدا ہو سکتے ہیں۔

Viewing 1 post (of 1 total)
  • You must be logged in to reply to this topic.

Comments are closed, but trackbacks and pingbacks are open.