Jirga South Asia

Viewing 1 post (of 1 total)

  • Author
    Posts
  • #9747
    Zaid
    Moderator

    بھارت میں انتہا پسند ہندوؤں کے ہاتھوں اجتماعی زیادتی کا شکار دلت لڑکی اسپتال میں دم توڑ گئی۔

    ویب ڈیسک – 19 سالہ لڑکی کو دارالحکومت سے 62 کلومیٹر دور ضلع ہتھراس میں چودہ ستمبر کو زیادتی اور تشدد کا نشانہ بنایا گیا تھا، اجتماعی زیادتی کا نشانہ بننے والی دلت لڑکی گذشتہ رات دہلی اسپتال میں موت کی وادی میں جا سوئی۔

    لڑکی کی زبان کاٹ دی گئی تھی جب کہ اس کی ریڑھ کی ہڈی بھی ٹوٹی ہوئی تھی۔

    لڑکی کی موت سے بھارت میں غم وغصے کی لہر دوڑگئی اور عوام نے مودی سرکار سے لواحقین کو انصاف فراہم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

    اجتماعی زیادتی کا شکار لڑکی کی موت کی خبر سامنے آتے ہی اسپتال کے باہر سیکڑوں شہری جمع ہو گئے جنہوں نے پولیس اور حکومت کے خلاف شدید احتجاج کیا۔

    لڑکی کے ساتھ ہونے والے ظلم پر احتجاج کرنے والے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے پولیس کی طرف سے لاٹھی چارج کیا گیا۔

    بین الاقوامی ذرائع ابلاغ کے مطابق پولیس نے انیس سالہ لڑکی سے اجتماعی زیادتی کی تحقیقات کے لیے چار افراد کو گرفتار کیا ہے جن سے تفتیش کی جا رہی ہے۔

    کانگریس رہنما راہول گاندھی کا کہنا ہے کہ وہ حقائق کو چھپانے نہیں دیں گے۔ اس ظلم کے ذمہ داروں کو ہر صورت بے نقاب کیا جائے گا۔

    اترپردیش کی سابق وزیراعلیٰ اور دلت رہنما مایا وتی نے مجرموں کو جلد از جلد گرفتار کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاج کی دھمکی دی ہے۔

    بھارتی کرکٹرز اور فنکاروں نے بھی مجرموں کی جلد از جلد گرفتاری اور انہیں سخت سے سخت سزا دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

    بھارت خواتین کے لیے دنیا کا سب سے خطرناک ملک بن چکا ہے۔ بھارتی حکومت کی ہی جانب سے جاری کردہ رپورٹ کے مطابق بھارت میں ہر پندرہ منٹ میں ایک خاتون کو زیادتی کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔

    This article originally appeared on Hum News

Viewing 1 post (of 1 total)
  • You must be logged in to reply to this topic.