Jirga Pakistan

Viewing 1 post (of 1 total)

  • Author
    Posts
  • #8459
    admin
    Keymaster

     کراچی: معروف شاعر، مزاح نگار اور ماہر تعلیم پروفیسر عنایت علی خان انتقال کر گئے۔ ان کی نماز جنازہ عائشہ مسجد ماڈل کالونی میں ادا کردی گئی، تدفین ماڈل کالونی کے مقامی قبرستان میں ہوگی۔

    پروفیسر عنایت علی خان 1935 میں بھارتی ریاست ٹونک میں پیدا ہوئے اور نومبر 1948 میں ہجرت کر کے حیدرآباد میں سکونت اختیار کی۔

    پروفیسر عنایت علی خان نے 1962 میں سندھ یونیورسٹی سے ایم اے کے امتحان میں ٹاپ کیا۔ انہوں نے سندھ بک بورڈ کے لیے اردو اور اسلامیات کے مضامین پر مشتمل درسی کتابیں بھی تحریر کیں۔

    پروفیسر عنایت علی خان پیشے کے لحاظ سے ماہر تعلیم تھے لیکن انہیں مقبولیت طنز و مزاح پر مشتمل شاعری سے ملی۔

    مرحوم نے پاکستان اور دنیا کے کئی ملکوں میں مشاعروں کی رونق بڑھائی اور اپنی مزاحیہ شاعری سے سامعین کو لوٹ پوٹ ہونے پر مجبور کر دیا۔

    طنز و مزاح پر مشتمل شاعری کی وجہ سے پروفیسر عنایت علی خان کو اکبر ثانی بھی قرار دیا گیا۔ انہوں نے ازراہ عنایت، عنایات، عنایتیں کیا کیا اور نہایت کے نام سے کتابیں لکھیں۔نامور شاعر پروفیسر عنایت علی کا انتقال گزشتہ شب دل کا دورہ پڑنے سے ہوا۔ مرحوم کی عمر 85 برس تھی اور وہ کئی ماہ سے علیل تھے۔

    پروفیسر عنایت علی خان نے بچوں کے لیے کہانیوں اور نظموں کی دو کتابیں بھی لکھیں، ان کی نظم بول میری مچھلی کے کئی مزاحیہ قطعات زبان زد عام ہوئے۔ 

Viewing 1 post (of 1 total)
  • You must be logged in to reply to this topic.