Jirga Pakistan

  • This topic is empty.
Viewing 1 post (of 1 total)

  • Author
    Posts
  • #12369
    Zaid
    Moderator

    اسلام آباد: پاکستان نے کہا ہے کہ وہ جوہری ہتھیاروں کے معاہدے ٹریٹی آن دی پروہوبیشن آف نیو کلیئر ویپنز کی کسی بھی شق کا پاپند نہیں۔ جوہری تخفیف اسلحہ کے اقدامات کیلئے ریاستی سلامتی کے امور کو مدنظر رکھنا ناگزیر ہے اور ہم ایسا معاہدہ چاہتے ہیں جو تمام ریاستوں کو مساوی، یقینی سلامتی کا حق دے ۔

    دفتر خارجہ کے ترجمان زاہد حفیظ چوہدری نے آج ایک بیان میں زور دیتے ہوئے کہا کہ یہ معاہدہ نہ تو بین الاقوامی قانون کا حصہ ہے اور نہ ہی کسی طور پر بین الاقوامی قانون سے اس کا کوئی تعلق ہے۔

    ترجمان نے کہا کہ ایٹمی ہتھیاروں پر پابندی کا معاہدہ جو جولائی2017ء میں اقوام متحدہ کے تخفیف اسلحہ مذاکراتی فورموں سے بالا تر حیثیت کے تحت طے ہوا تھا اس کیلئے پاکستان سمیت جوہری ہتھیاروں کے حامل ممالک نے بھی مذاکرات میںشرکت نہیں کی تھی کیونکہ مذاکرات تمام فریقوں میں اتفاق رائے پیدا کرنے میں ناکام ثابت ہوئے تھے۔

    ترجمان نے کہا کہ غیر ایٹمی ممالک نے بھی اس معاہدے کا حصہ بننے سے گریز کیا تھا۔

    ترجمان نے کہا کہ ایٹمی اسلحہ میں تخفیف کے کسی بھی اقدام کیلئے تمام ملکوں کی سلامتی کو ملحوظ رکھنا ضروری ہے۔

Viewing 1 post (of 1 total)
  • You must be logged in to reply to this topic.

Comments are closed, but trackbacks and pingbacks are open.