• This topic is empty.
Viewing 1 post (of 1 total)

  • Author
    Posts
  • #12031
    Shaista Khan
    Participant

    ویب ڈیسک — کینیڈا میں پیر کے روز شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ کینیڈا میں ہزاروں لڑکیوں کی شادیاں کم عمری میں کی گئی ہیں۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ غیر سرکاری طور پر شادی کرنے کے اس رجحان کی وجہ سے اس عمل کو روکنا مشکل تر ہوتا جائے گا۔

    مانٹریال کی مک گل یونیورسٹی کی ایک تحقیق میں یہ بتایا گیا ہے کہ 2000 سے 2018 کے دوران کینیڈا میں 3600 ایسی لڑکیوں کی شادی کے سرٹیفیکیٹ جاری کیے گئے جن کی عمریں 18 برس سے کم تھیں۔

    تحقیق میں یہ بھی انکشاف ہوا کہ یہ تعداد اصل تعداد کا کچھ ہی حصہ ہے کیونکہ حالیہ برسوں میں کینیڈا میں کامن لا کے تحت جوڑوں کے ساتھ رہنے کا رواج بڑھا ہے۔ ایسے میں حقوق کی ضمانت نہیں ہوتی۔

    تحقیق میں بتایا گیا کہ 2016 سے اب تک کامن لا پارٹنرشپ میں​ 2600 ایسے مواقع تھے کہ فریقین میں سے ایک 18 برس سے کم عمر تھا۔ کامن لا پارٹنرشپ بغیر شادی کی اس زندگی کو کہا جاتا ہے جس میں جوڑا کم از کم ایک سال تک ایک دوسرے کے ساتھ رہ رہا ہو۔

    تحقیق میں شامل ایک مصنفہ الیسا کیوسکی کا کہنا ہے کہ یہ معلومات کینیڈا کے ’’چائلڈ میریج‘‘ سے متعلق عالمی رہنمائی کے موقف کے خلاف ہیں، جس میں کینیڈا اقوام متحدہ کے ساتھ مل کر کم عمری کی شادیوں کی روک تھام کے لیے کام کر رہا ہے۔

    ان کے بقول ’’ہمارے نتائج سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ کینیڈا کو اقوام متحدہ کے چائلڈ میریج کے سدباب کے لیے پائیدار اہداف پر عمل سے متعلق اپنے وعدے کو پورا کرنے کی خاطر اپنے ملک میں کام کرنا ہو گا۔‘‘

    کیوسکی کا کہنا تھا کہ کینیڈا ایک طرف تو دنیا بھر میں کم عمری کی شادیوں کے خلاف بات کر رہا ہے لیکن دوسری طرف یہ کام کینیڈا بھر میں قانونی طور پر کیا جا رہا ہے۔

    رائٹرز کے مطابق کینیڈا میں وومن اینڈ جینڈر منسٹر کے آفس سے اس تحقیق کے نتائج پر تبصرے کے لیے تاحال رابطہ نہ ہو سکا۔

    کینیڈا میں 2016 سے اب تک 95 فیصد کم عمری کی شادیاں غیر رسمی طور پر کی گئی ہیں۔ 2006 میں ان کی تعداد اس سے آدھی تھی۔

    More on this story from VOA Urdu

Viewing 1 post (of 1 total)
  • You must be logged in to reply to this topic.

Comments are closed, but trackbacks and pingbacks are open.